اسلام نے عورت کو معاشرتی اور سماجی سطح پر بلند مقام عطا کیا : سمیرا رفاقت ایڈووکیٹ

اسلام نے عورت کو جو حقوق عطا کیے وہ دنیا کے دیگر مذاہب دینے سے قاصر ہیں
اسلام عورت کے مذہبی، سماجی، معاشرتی، آئینی اور قانونی حقوق کا ضامن ہے
منہاج القرآن سیکرٹریٹ میں ’’اسلام اورحقوق نسواں‘‘ سیمینار سے مقررین کا خطاب

منہاج القرآن ویمن لیگ کے زیراہتمام تحریک منہاج القرآن کے مرکزی سیکرٹریٹ میں سیمینار ’’اسلام اور حقوق نسواں‘‘ کے عنوان سے منعقد ہوا جس کی صدارت منہاج القرآن کی مرکزی ناظمہ سمیرا رفاقت ایڈووکیٹ نے کی۔ سیمینار میں مختلف شعبہ ہائے زندگی سے تعلق رکھنے والی سینکڑوں خواتین نے شرکت کی۔ سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے سیمرا رفاقت ایڈووکیٹ نے کہا کہ اسلام میں عورت کے مقام کا اندازہ اس بات سے لگایا جاسکتا ہے کہ عورت جب ماں کی صورت میں ہوتی ہے تو اس کے قدموں تلے جنت قرار دی جاتی ہے۔ یہ اسلام ہی ہے جس نے ماں کو معاشرے کا سب سے زیادہ مکرم اور محترم مقام عطا کیا۔ اسی طرح حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے بیٹی کو انتہائی احترام اور عزت عطا کی اور اسے معاشرتی وسماجی سطح پر بلند مقام عطا کیا۔ انہوں نے کہا کہ اسلام نے عورت کو جو حقوق عطا کیے وہ دنیا کے دیگر مذاہب دینے سے قاصر ہیں۔ مسلم عورت پر بھی یہ بھاری ذمہ داری عائد ہوتی ہے کہ وہ اپنے بچوں کی اچھی تربیت کر کے معاشر ے کو ایسے افراد مہیا کرے جو اسلام کے احیاء اور سر بلندی کے لیے کام کر سکیں۔

مرکزی ناظمہ ویمن لیگ سمیرا رفاقت نے کہا کہ اسلام نے روز اول سے ہی عورت کے مذہبی، سماجی، معاشرتی، آئینی، قانونی، سیاسی اور انتظامی کردار کا نہ صرف اعتراف کیا ہے بلکہ اس کے جملہ حقوق کی ضمانت بھی فراہم کی ہے۔ انہوں نے کہا کہ اسلام کی عالمگیر تحریک منہاج القرآن کے بانی و سرپرست شیخ الاسلام ڈاکٹر محمد طاہرالقادری بھی خواتین کے مصطفوی اور انقلابی کردار کے حامی اور علمبردار ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اسلام کی تاریخ ’’حقوق نسواں‘‘ کے حوالے سے نہایت درخشندہ روایات کی امین رہی ہیں۔ مرد اور عورت کا ایک دوسرے کے ساتھ شانہ بشانہ، قدم سے قدم ملا کر چلنے کا تصور نہ ہو تو دونوں کو ایک دوسرے کا زوج قرار نہیں دیا جاسکتا اور پھر ہم سفر کے لیے جتنی عزت وتکریم، راحت و آرام ضروری سمجھا جائے اتنا ہی سفر اچھا ہوگا۔ ہم سفر اچھا ہو گا تو سفر بھی اتنا ہی اچھا گزرے گا۔ یہی وجہ ہے کہ حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے اچھی بیوی کو دنیا کی سب سے قیمتی متاع قرار دیا ہے۔

تقریب کے اختتام پر رافعہ علی نے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ اسلام کو مضبوطی سے تھامنے میں ہی عورت کی بقاء ہے۔ کردار کی مضبوطی اور دینی قدروں کی پاسداری عورت کو معاشرے میں قابل عزت مقام عطا کرتی ہے جبکہ اغیار کے نقش قدم پر چلنے سے عورت اپنا تقدس کھو دیتی ہے، اسلام نے عورت کوعصمت اور تقدس عطا کیا۔ اسلام کی عطا کردہ تکریم اور عزت کی بدولت ہی حضرت خدیجۃ الکبریٰ رضی اللہ عنہا، حضرت عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہا، حضرت سیدہ فاطمۃ الزہرہ رضی اللہ عنہا اور سیدہ زینب  رضی اللہ عنہا کا کردار آج زندہ ہے۔ اسلام نے عورت کو رفعت اور بلندیاں عطا کیں۔ آج کی عورت کا بھی فرض ہے کہ وہ حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے دین کی سربلندی کے لیے کوئی دقیقہ فروگزاشت نہ کرے۔

تبصرہ

تلاش

ویڈیو

We Want to CHANGE the Worst System of Pakistan
Presentation MQI websites
Advertise Here
Top