چیف جسٹس کی ہدایات سے سپیڈی جسٹس کے قانونی تقاضے پورے ہونگے، ورثا شہدائے ماڈل ٹاؤن

لاہور ہائیکورٹ میں 4 اپیلیں زیر سماعت ہیں، باقر نجفی رپورٹ منگوانے کا حکم اہم ہے
سانحہ ماڈل ٹاؤن میں ملوث پولیس افسران، اہلکار عہدے سے ہٹائے جائیں، میڈیا سے گفتگو

Chief Justice SC orders ATC to hear Model Town case on daily basis

لاہور (14 اپریل 2018) شہدائے ماڈل ٹاؤن کے ورثاء اور سانحہ ماڈل ٹاؤن کے وکلاء نے سپریم کورٹ رجسٹری میں حاضری کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ سپیڈی جسٹس کیلئے چیف جسٹس نے جو ہدایات دی ہیں اس سے فوری انصاف کی فراہمی کے قانونی تقاضے پورے ہونگے۔ بالخصوص لاہور ہائیکورٹ میں عرصہ سے التوا کا شکار رٹ پٹیشنز کے جلد فیصلوں سے انصاف کا عمل آگے بڑھے گا۔ انہوں نے مطالبہ کیا کہ اے ٹی سی کی طرف سے طلب کئے گئے افسران اور اہلکاروں کو عہدوں سے ہٹایا جائے، وہ ملزمان اپنی سرکاری پوزیشنز کی وجہ سے کیس پر اثر انداز ہو رہے ہیں جو فیئر ٹرائل کے آئینی تقاضوں کے خلاف ہے۔

مستغیث جوادحامد، نعیم الدین چوہدری ایڈووکیٹ، سردار غضنفر حسین ایڈووکیٹ، شکیل ممکا ایڈووکیٹ نے شہدائے ماڈل ٹاؤن کے ورثاء کے ہمراہ سپریم کورٹ رجسٹری کے باہر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ اس وقت لاہور ہائیکورٹ میں سانحہ ماڈل ٹاؤن کیس کے حوالے سے 4 رٹ پٹیشن دائر ہیں جن کے فیصلے نہیں ہوئے، ان میں سے ایک رٹ پٹیشن نواز شریف، شہباز شریف سمیت 14 ملزمان کی طلبی کی ہے جنہیں انسداد دہشتگردی کی عدالت کی طرف سے طلب نہیں کیا گیا، ایک رٹ سابق آئی جی پنجاب مشتاق سکھیرا سے متعلق ہے۔ سابق آئی جی نے اے ٹی سی کے فیصلے کے خلاف درخواست دائر کر رکھی ہے اور سٹے آرڈر لے رکھا ہے، تیسری سانحہ ماڈل ٹاؤن کے حوالے سے بننے والی جے آئی ٹی کی رپورٹ اور جسٹس باقر نجفی کمیشن کی رپورٹ سے منسلک دستاویزات کی عدم فراہمی سے ہے۔ چوتھی رٹ سانحہ ماڈل ٹاؤن میں ملوث پولیس افسران اور اہلکاروں کو عہدوں سے ہٹانے سے متعلق ہے۔

میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے شہداء کے ورثا نے کہا کہ ہمیں خوشی ہے کہ چیف جسٹس سپریم کورٹ نے جسٹس باقر نجفی کمیشن کی رپورٹ طلب کی ہے، پہلی باریہ رپورٹ اعلیٰ عدلیہ کے ریکارڈ پر آرہی ہے۔ پاکستان عوامی تحریک کے سیکرٹری جنرل خرم نواز گنڈا پور نے کہاہے کہ سانحہ ماڈل ٹاؤن قومی و بین الاقوامی سطح پر توجہ کا حامل کیس ہے، ہماری قانونی جدوجہد جاری ہے، سانحہ کے ماسٹر مائنڈز کی طلبی چاہتے ہیں۔ سپریم کورٹ کی مانیٹرنگ اور استغاثہ کیس کی روزانہ کی سماعت سے جلد انصاف کی امید پیدا ہوئی ہے۔

تبصرہ

تلاش

ویڈیو

We Want to CHANGE the Worst System of Pakistan
Presentation MQI websites
Advertise Here
Top